خود کشی کے 2واقعات کے بعد پب جی گیم پر پابندی لگانے کا فیصلہ

0
27
خود کشی کے 2واقعات کے بعد پب جی گیم پر پابندی لگانے کا فیصلہ

 

خود کشی کے 2واقعات کے بعد پب جی گیم پر پابندی لگانے کا فیصلہ

خود کشی کے 2واقعات کے بعد پب جی گیم پر پابندی لگانے کا فیصلہ .آن لائن گیم پب جی کی خودکشیوں کے 2 واقعات کے بعد کے پنجاب پولیس نے اس کھیل پر پابندی لگوانی کا مظاہرہ کیا۔ ڈی آئی جی ریساکیشفاق خان نے کہا کہ پب جی گیم بند کرانے کے لئے پی ٹی اے اور ایف آئی اے کا خط لکھا ہوا ہے ، پب جی گیم آئس سے زیادہ خطرناک اور آڈیجیٹل شوہ بنتا پروگرام ہے ، 4 دن میں 2 نوجوانوں نے خود کو خود کو مشکل سے متاثر کیا ہے۔ ہے۔

واضح رہے کہ لاہور میں 2 نوجوانوں نے خودکشی لی ، خودکشی کا تازہ واقعہ ، لاہور کے علاقے مصطفی ٹاون میں پیش کیا جہاں سولہ سالہ نوجوان خود پولیس کا کہنا تھا ، جس میں محمد ذکریا کی لاش پنک سے آگیا ہے۔ ۔پولیس نے بتایا کہ قریب قریب موبائل ملاپ کے پاس ایک ویڈیو گیم پب جی چل رہی ہے۔

دو روز قبل بھی لاہور کے نوجوانوں نے خودکشی کی تھی ، جونٹی جوزف کا ویڈیو گیم ہونے کی وجہ سے اس کے والد کی طرف سے رات کی رات جھگڑا ہوا تھا ، اس کے والد کی ڈانٹا اور ہر وقت موبائل پر پب جیج سے انکار کیا گیا تھا۔ جس کے بعد وہ ناراض ہو کر رہ گیا۔ اگلی صبح جونٹی جوزف نے اس کے پنک پہنچے تھے۔