خارش کیوں ہوتی ہے؟اس کی وجوہات اور علاج صدقہ جاریہ سمجھ کر شیئر ضرور کریں

ڈیلی نیوز! خارش ایک نہایت تکلیف دہ بیماری ہے، یہ دیگر کئی امراض کی وجہ سے لگتی ہے ان میں کچھ جلد کی بیماریاں اور کچھ اندرونی بیماریاں ہوتی ہیں۔خارش کم ہو تو اس کا علاج ممکن اور آسان ہوتا ہے، اگر یہ شدت اختیار کرجائے تو اس کے ساتھ زندگی گزارنا مشکل ہوجاتا ہے۔جسم پر خارش لگنے کی عام وجوہات میں چٹ پٹے کھانے، حشرات کے کاٹنے یا دواؤں کا استعمال ہوتا ہے۔ سعودی میگزین سیدیتی نیٹ میں شائع مضمون

میں جلدی امراض کی ماہر ڈاکٹرشذى العواودةنے خارش کے اسباب پیش کیے ہیں۔ جسم پر خارش لگنے کے اسباب متعدد ہوسکتے ہیں ان میں سے کچھ نامیاتی اور کچھ نفسیاتی ہوتے ہیں۔ ماہر ڈاکٹر چیک اپ کے بعد ان کی تشخیص کرتا ہے۔ عام طور پر خارش لگنے کے اسباب یہ ہوتے ہیں۔ جلد کی غیر متعدی بیماریاںجلد کی کچھ غیر متعدی بیماریاں ہیں ،جن کی وجہ سے جلد پر خارش ہوتی ہے، جیسے سوریاسس، ایکزیما، خشک جلد اور الرجی وغیرہ یہ کچھ خاص قسم کے کھانوں اوردوائیوں کے نتیجے میں ہوتی ہیں۔حشرات کے کاٹنے سےجسم پر کسی کیڑے یا مچھر وغیرہ کے کاٹنے سے زخم سا ہو جاتا ہے جہاں خارش کے بعد یہ مزید پھیل جاتی ہے۔ اندرونی بیماریاںکچھ بیماریاں ایسی ہیں جو انسان کو تکلیف دیتی ہیں

اور یہ جلد کے لیے خارش کا باعث بھی بنتی ہیں۔ جیسے گردے اور جگر کی بیماری، شدید خون کی کمی، لمفوما اور تائرائیڈ کی خرابی وغیرہ۔ نفسیاتی وجوہات کچھ ذہنی بیماریاں ہیں جن کے ساتھ جلد کی خارش پیدا ہوتی ہے۔ جیسے جنونی اضطراب اور تناؤ کی بیماری وغیرہ۔ اس کا علاج ماہر نفسیات کے ذریعے کیا جاتا ہے۔جلن اور زخم سےجسم کا کوئی حصہ جلنے یا زخم کی وجہ سے بھی خارش لگتی ہے جو پورے جسم پر پھیل جاتی ہے۔جسم پر خارش لگنے کی علاماتجلد پر نشانات: خارش لگنے کی صورت میں جسم پر ہلکے ہلکے سرخ نشان پڑجاتے ہیں، یہ کسی خاص مقام پر یا پھر پورے جسم پر ہوتے ہیں۔ ظاہری علامات: مسلسل خارش کرنے سے آپ کے جسم پر نشانات پڑجاتے ہیں،

ایسی صورت میں ڈاکٹر سے رجوع کرنا چاہیے۔جسمانی خارش کا علاجڈاکٹر مریضوں کو خارش کی بیماری کی نوعیت دیکھنے اور چیک اپ کرنے کے بعد علاج تجویز کرتے ہیں۔اس میں خارش دور کرنے کی گولیاں اور کچھ کریمیں تجویز کی جاتی ہیں۔

Leave a Comment

error: Content is protected !!